Clicky

تازہ ترین خبر
ہوم / اہم موضوعات / آندرے رسل کو 2 برس پابندی کا سامنا

آندرے رسل کو 2 برس پابندی کا سامنا

ویسٹ انڈین آل رائونڈر کا ڈوپنگ کیس میں قسمت کا فیصلہ 31 جنوری کو ہوگا۔

ویسٹ انڈین آل رائونڈر آندرے رسل کے ڈوپنگ کیس کا فیصلہ اینٹی ڈوپنگ ٹریبونل کی جانب سے 31 جنوری کو سنایا جائے گا۔ ٹریبونل اس بات کا جائزہ لے رہا ہے کہ آندرے رسل نے اینٹی ڈوپنگ ایجنسی کے ’جائے مقام‘ کے حوالے سے قانون کی جان بوجھ کر خلاف ورزی کی یا نہیں؟

واڈا قوانین کے تحت ہر کھلاڑی کو اپنے متعلقہ اینٹی ڈوپنگ کمیشن کو اس بات سے آگاہ رکھنا ہوتا ہے کہ وہ اگلے کچھ عرصے کے دوران کہاں پر ہوں گے تاکہ ضرورت پڑنے پر ان کا ڈوپ ٹیسٹ لیا جاسکے۔

اسی قانون میں یہ بات واضح ہے کہ اگر کوئی کھلاڑی 12 ماہ کے دوران تین مرتبہ اپنے ’جائے مقام‘ سے متعلق آگاہ نہیں کرتا تو اس پر کھیل کے دروازے دو برس کے لئے بند کیے جاسکتے ہیں۔

آندرے رسل کو 2015 میں ڈوپنگ کمیشن کی جانب سے جنوری اور پھر جولائی میں دو مرتبہ فونز، ای میلز اور خطوط کے ذریعے اپنا جائے مقام بتانے کو کہا گیا مگر انہوں نے کوئی جواب نہیں دیا۔

ٹریبونل کی سماعت میں رسل کا کہنا تھا کہ وہ کرکٹ کھیلنے میں مصروف ہونے کی وجہ سے جواب نہیں دے سکے اور ویسے بھی یہ کام ان کے منیجر اور ایجنٹ وغیرہ کا ہے۔

ٹریبونل نے اگر رسل کو جان بوجھ کر ٹیسٹ سے بچنے کے لئے جواب نہ دینے کا مرتکب پایا تو ان پر دو برس پابندی کی سزا عائد ہوسکتی ہے۔

رسل کے ساتھ مختلف ٹوئنٹی 20 لیگ فرنچائزز بھی ان کی قسمت کا فیصلہ سننے کی منتظر ہیں جن میں پاکستان سپر لیگ کی اسلام آباد یونائیٹڈ ٹیم بھی شامل ہے۔

loading...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے