Clicky

ہوم / ممالک / پاکستان / 15سال بعد آسٹریلیاکی بدترحالت،28سال بعددوڈیبیوز

15سال بعد آسٹریلیاکی بدترحالت،28سال بعددوڈیبیوز

پاکستان اور آسٹریلیاکے درمیان برسبین کے مقام پر کھیلے گئے پہلے ون ڈے انٹرنیشنل میچ میں پاکستان ٹیم 92رنزکی شکست سے دوچار ہوئی۔اس میچ سے متعلق چند اہم اعدادوشمار ذیل میں پیش کئے جارہے ہیں۔

پاکستان کی آسٹریلیامیں مسلسل نویں ناکامی

  • پاکستان کرکٹ ٹیم برسبین کے مقام پر کھیلے گئے سیریز کے پہلے ون ڈے میچ میں 269رنزکے ہدف کے تعاقب میں 176رنزپر ڈھیر ہوکر92رنزکی شکست سے دوچار ہوگئی جو کینگروز کے دیس میں میزبان سائیڈکے خلاف مسلسل نویں ناکامی ہے جنہوں نے آخری بار 2005ء میں انضمام الحق کی قیادت میں فتح حاصل کی تھی۔جس کے بعد سے کھیلے گئے اگلے تمام 9 میچوں میں اُسے کینگروزکے خلاف شکست کا سامناکرناپڑاہے۔
  • 15سالوں میں آسڑیلیاکا پاکستان کیخلاف بدترین آغاز

برسبین ون ڈے میچ میں آسٹریلوی ٹیم پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے 78 کے مجموعی اسکورپرپانچ وکٹیں گنوابیٹھی جو جون 2002ء میں برسبین کے مقام پر 5/65کی کارکردگی کے بعد پاکستان کے خلاف پانچویں وکٹ گنوانے پر آسٹریلیا کا کم ترین اسکور ہے۔

علاوہ ازیں 5/78رنزکینگروزکاشاہینوں کے خلاف پانچویں وکٹ گنوانے پر مجموعی طورپر پانچواں کم ترین اسکور ہے۔کینگروز کو ایسی بدترین صورتحال کا سامنا فروری1985ء میں ملبورن کے مقام پرکرناپڑا تھا جب وہ پاکستان کے خلاف42رنزپر پانچ وکٹیں گنوابیٹھے تھے۔ یہ پاکستان کے خلاف 50 سے کم رنزپر پانچ وکٹیں گنوانے کا آسٹریلوی تاریخ کا اکلوتا واقعہ بھی ہے۔

محمد عامر نے یکے بعد دیگرے دو بالزپر ڈیوڈوارنر اور اسٹیون اسمتھ کو آئوٹ کرکے آسٹریلیا کو 2/13 کی صورتحال سے دوچار کیا
محمد عامر نے یکے بعد دیگرے دو وکٹیں حاصل کرکے آسٹریلیا کو 5/78 کی صورتحال سے دوچار کرنے میں اہم کردار اداکیا
  • پاکستان کو 90+رنزسے مارجن سے ساتویں شکست

پاکستان کو برسبین کے ون ڈے میچ میں 92رنز کی شکست کا سامنا کرناپڑاجو اُس کی کینگروزکے خلاف90یا زائد رنزکے مارجن سے ہون

ے والی مجموعی طورپرساتویں شکست ہے اور یہ ساتوں شکستیں ہی اُسے رواں صدی یعنی2000ء یا اس کے بعد ہی ہوئی ہیں جن میں سے ایسی دو شکستیں اُسے گزشتہ دورۂ آسٹریلیا2010ء میں ہوئی تھیں جبکہ حالیہ دورے کا آغاز ہی 90+رنزکی شکست سے ہوا ہے۔

  • 28سال بعد دوکینگروکرکٹرزکاایک ساتھ ڈیبیو

برسبین ون ڈے میچ میں آسٹریلیاکی جانب سے مڈل آرڈر بیٹسمین کرس لئن اور فاسٹ بولر بیلے اسٹنلیکے نے ڈیبیوز کئے ۔یہ مجموعی طورپرپانچواں جبکہ 1988ء کے بعد پہلا موقع تھا جب پاکستان کے خلاف ایک ہی ون ڈے میچ میں دو آسٹریلوی کرکٹرز نے ون ڈے ڈیبیوزکئے۔

اس سے قبل ایسا آخری واقعہ 28 سال بعد لاہور کے مقام پر پیش آیاتھا جب آئن ہیلی جمی سڈنز نے اپنے ون ڈے ڈیبیوزکئے تھے۔یہاں یہ بات بھی قابل ذکرہے کہ پاکستان کے خلاف ایک ون ڈے میچ میں کبھی بھی دوسے زائد آسٹریلوی کرکٹرز نے ڈیبیوزنہیں کئے ہیں۔

یہ متعلقہ مواد بھی پڑھیں

ہاشم آملہ نے ٹنڈولکر اور کوہلی کو پیچھے چھوڑدیا

جنوبی افریقہ کے باریش بلے باز ہاشم آملہ نے کم اننگزمیں50انٹرنیشنل سنچریاں مکمل کرنے کا …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے