Clicky

ہوم / اسپورٹس لنک میگزین / پاکستانی و بھارتی بولرزمیں کون کتنے کامیاب؟ [اعدادوشمار]

پاکستانی و بھارتی بولرزمیں کون کتنے کامیاب؟ [اعدادوشمار]

روایتی حریف پاکستان اور بھارت کے درمیان میچز میں شائقین کا جذبہ دیدنی ہوتا ہے اورریکارڈ ز سے شغف رکھنے والے شائقین تو باہمی میچوں کے ریکارڈز اور دیگر اعدادوشمار جاننے کیلئے بے چین رہتے ہیں۔

پاکستان میں کھیلوں کے سرفہرست میگزین ’’اسپورٹس لنک‘‘ نے اپنے تازہ ایڈیشن (27نومبر سے3دسمبر2016ئ) میں شائقین ِ کرکٹ کی اس خواہش اور ضرورت کو مدنظر رکھتے ہوئے اپنے اہم ترین سلسلے ’’ٹاکرا‘‘ میں پاکستان اور بھارت کے درمیان کھیلے گئے میچوں میں دونوں ٹیموں کے بولنگ اعدادوشمارکا موازنہ پیش کیا ہے۔

اسپورٹس لنک کے تازہ ایڈیشن (27 نومبر تا 3 دسمبر 2016ء) کا سرورق
اسپورٹس لنک کے تازہ ایڈیشن (27 نومبر تا 3 دسمبر 2016ء) کا سرورق

اس مخصوص انداز کے ’’ٹاکرا‘‘ میں پاک بھارت ٹیسٹ اور ون ڈ ے میچوں میں الگ الگ طورپراعدادوشمار شائع کئے گئے ہیں کہ ان میچوں میں کس ٹیم کی جانب سے کتنی وکٹیں اور کس اوسط واسٹرائک ریٹ سے لی گئیں اور کس ٹیم کے بولروں نے زیادہ میڈن اوورزپھینکے،اننگزمیں5+اورمیچ میں دس یا زائد وکٹیں حاصل کیں۔دونوں فارمیٹس کے ان باہمی میچوں میں زیادہ وکٹیں حاصل کرنے والے بولروں کی بھی تفصیل شائع کی گئی ہے۔

ان اعدادوشمار کے مطابق خلاف ِ توقع پاکستان اور بھارت کے بولروں کے ٹیسٹ میچوں میں اعدادوشمار میں بہت زیادہ فرق نہیں ہے جبکہ ون ڈے میچوں میں پاکستانی بولرز کے اعدادوشمار آئوٹ کلاس ہیں ۔ حقیقی معنوں میں بولنگ اعدادوشمار میں بھارت کا پاکستان سے موازنہ ہی نہیں بنتا۔

’’پاک بھارت بولنگ ٹاکرا‘‘ اور دیگر معلوماتی رپورٹس آپ ہفت روزہ ’’اسپورٹس لنک‘‘ میں ملاحظہ کرسکتے ہیں۔

loading...

یہ متعلقہ مواد بھی پڑھیں

’اسپورٹس لنک‘ کا جون ایڈیشن 1 شائع ہوگیا

پاکستان میں کھیلوں کے سرفہرست میگزین ’اسپورٹس لنک‘ کا جون ایڈیشن1 شائع ہوگیا ہے جس …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے